https://pakistan.asia-news.com/ur/articles/cnmi_pf/features/2019/07/16/feature-02
| سفارتکاری

عمران خان کے دورۂ امریکہ سے قبل پاکستان کی نظریں تجدید کردہ روابط پر

اے ایف پی

image

سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ وزیرِ اعظم عمران خان کے 21 جولائی کو طے شدہ واشنگٹن ڈی سی میں خطاب کی تشہیر کر رہی ہے۔ [سوشل میڈیا]

اسلام آباد -- پاکستان نے منگل (16 جولائی) کے روز ان امیدوں کا اظہار کیا ہے کہ وزیرِ اعظم عمران خان کا اس مہینے کے آخر میں وائیٹ ہاؤس کا پہلا دوری واشنگٹن کے ساتھ اس کے تعلقات کو بہتر بنانے میں مدد کرے گا کیونکہ امریکہ افغانستان میں جنگ کے خاتمے کا خواہاں ہے۔

مبصرین نے پیشین گوئی کی ہے کہ 22 جولائی کو خان اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان بات چیت کا مرکزی نکتہ یہی تنازعہ ہو گا۔ خان کا اس روز بیرونِ ملک پاکستانیوں سے خطاب کرنے کے لیے 21 جولائی کو پہنچنا متوقع ہے۔

ایک مشترکہ ذمہ داری

اسلام آباد میں ایک سیمینار کے دوران وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا، "پاکستان خلوصِ نیت سے امریکہ اور طالبان کے مذاکرات میں سہولت کاری کرتا رہا ہے، اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ یہ ابھی بھی ایک مشترکہ ذمہ داری ہے۔"

image

سوشل میڈیا پر وزیرِ اعظم عمران خان کے واشنگٹن کے طے شدہ دورے کے متعلق ایک پوسٹ پاک-امریکہ دوستی کی ستائش کرتی ہے۔ [سوشل میڈیا]

انہوں نے مزید کہا، "لہٰذا دو طرفہ امور، معاشی اور تجارتی تعاون، جنوبی ایشیاء میں امن و استحکام کے لیےافغانستان کی طرف سے وسیع تر مشغولیت کے لیےکام کرنا مناسب ہو گا۔"

قریشی نے کہا کہ ٹرمپ کا خان کو مدعو کرنا "دونوں اطراف کے لیے تعلق کی اہمیت" کی عکاسی کرتا ہے۔

کیا آپ کو یہ مضمون پسند آیا
2
نہیں
تبصرے 0
تبصرہ کی پالیسی
Captcha