http://pakistan.asia-news.com/ur/articles/cnmi_pf/features/2019/09/16/feature-01
| سفارتکاری

کمزور ہو جانے والے افغان طالبان کا مذاکرات کی ناکامی کے بعد روس کا رخ کرنے پر سوالات اٹھ کھڑے ہوئے

پاکستان فارورڈ

روسی وزیر خارجہ سیرگی لاوروف (بائیں) ، طالبان امن مذاکرات کار شیر محمد عباس ستانکزئی (وسط) اور افغانستان میں ایران کے سفیر محمد رضا بہرامی (دائیں) کا گذشتہ نو نومبر کو ماسکو میں ایک تصویر کے لئے پوز۔ [یوری کاڈوبنوف / اے ایف پی]

ماسکو - مبصرین حیرت میں ہیں کہ حالیہ سفر کا کیا کریں جو افغان طالبان رہنماؤں نے ہفتے کے آخر میں ماسکو سے امریکہ کے ساتھ مذاکرات کے دوران ان کی تدبیراتی ناکامی کے بعد اس گروپ کو ایک کمزور پوزیشن پر چھوڑ دیا تھا۔

تین طالبان عہدیداروں نے ماسکو میں 13 ستمبر کو روس کے افغانستان کے لئے خصوصی نمائندے ضمیر کابلوف سے ملاقات کی۔

مقامی خبر رساں اداروں کے مطابق ، قطر میں طالبان کی مذاکراتی ٹیم کے سربراہ شیر محمد عباس ستانکزئی نے وفد کی قیادت کی، جس میں طالبان کے ترجمان محمد سہیل شاہین اور ایک اور طالبان رہنما قاری دین محمد حنیف شامل تھے۔

روسی فوجی مارچ میں ماسکو کے ریڈ اسکوائر کے راستے مارچ کر رہے تھے۔ کریملن برسوں سے طالبان کی ایک بڑی فوجی حمایت ہے۔ [کریملن]

روس کی وزارت خارجہ اور سرکاری اعانت سے چلنے والی خبر رساں ایجنسی آر آئی اے نووستی نے اجلاس کی تصدیق کی۔

طالبان کے سوشل میڈیا اکاؤنٹس پر ماسکو کی تازہ ترین میٹنگ کے بارے میں کوئی تذکرہ نہیں کیا گیا، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ یہ گروپ اس واقعے کو کم کرنا چاہتا ہے۔

ظاہر ہے کہ یہ اجلاس "امن" پر تبادلہ خیال کرنے کے لئے تھا لیکن بہت سارے مبصرین اور تجزیہ کار اس پر یقین رکھتے ہیں۔

طالبان کی کمزور پوزیشن

امن مذاکرات کے آخری لمحات کے درمیان ستمبر کے پہلے ہفتے کے دوران کابل میں طالبان بم دھماکوں میں 30 سے زائد افراد ہلاک ہوگئے تھے، جسکی وجہ سے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ 8 ستمبر کو منصوبہ بند ہونے والے اجلاس کو منسوخ کرنے کا اعلان کریں گے۔

اس پر تشدد تشدد نے طالبان رہنماؤں کے ایک واضح حربے کو بے نقاب کيا هے: مذاکرات کی میز پر افغان حکومت اور اس کے بین الاقوامی اتحادیوں پر دباؤ ڈالنے کے لئے گروپ کے ذریعہ مسلسل شہریوں کے قتل کا استعمال کریں.

تاہم ، حتمی طور پر طالبان کی حکمت عملی غیر دانشمندانہ ثابتہوئی کیونکہ طالبان رہنماؤں نے قریب ایک سال تک جاری رہنے والے امن مذاکرات کے خاتمے کے بعد سے انہوں نے خود کو ایک کمزور پوزیشن میں پایا ہے۔

عسکری طور پر، طالبان کسی بھی بڑے سویلین سنٹر کو کنٹرول کرنے میں ناکام رہے ہیں کیونکہ افغان فورسز عسکریت پسند گروپ کے حملوں کو پسپا کرتی ہیں۔

طالبان رہنما بھی بڑھتی ہوئی داخلی تنازعات کا شکار ہیں۔ ایک بڑے حالیہ واقعے میں،طالبان کے ایک الگ الگ گروپ نے طالبان رہنما ملا ہیبت اللہ اخوندزادہ کے بھائی کے قتل کی ذمہ داری قبول کی ہے۔پاکستان کے شہر کوئٹہ کے قریب ایک مسجد پر حملے کے دوران۔

سینکڑوں طالبان جنگجو بھی افغان فورسز کے بڑھتے ہوئے دباؤ کا سامنا کرنے اور یہ جاننے کے بعد کہ طالبان کی لڑائی "جہاد نہیں" ہے کے بعد مقامی حکام کے سامنے ہتھیار ڈال چکے ہیں۔

طالبان رہنماؤں کو ان کے حامیوں کی جانب سے زبردست ردعمل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے کیونکہ ان کے خفیہ کاروبار اور افزودگی سکیموں کے بارے میں مزید اطلاعات سامنے آ رہی ہیں۔جبکہ گروپ کے رینک اور فائل ممبروں کو غربت، بیماری اور موت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

اسلام آباد میں رہنے والے صحافی طاہر خان، جو امن مذاکرات کو قریب سے پیش کرتے ہیں، نے ایک انٹرویو میں کہا، "طالبان کا وفد اب امن عمل سے متعلق حالیہ پیشرفتوں کا جائزہ لینے اور اس پر تبادلہ خیال کرنے کے لئے ہمسایہ ممالک کا دورہ کر رہا ہے۔"

انہوں نے کہا، "یہ وفد ایران، چین اور پاکستان کا بھی دورہ کرسکتا ہے۔"

طالبان کا ان ممالک سے بیرونی توثیق کے تعاقب میں جو افغانستان کے بہترین مفادات نہیں رکھتے ہیں اور یہ ظاہر کرتا ہے کہ یہ گروپ اپنا راستہ کھو بیٹھا ہے۔

صدر اشرف غنی کے ترجمان، صدیق صدیقی نے 14 ستمبر کو کابل میں ایک پریس کانفرنس میں کہا، "چین یا روس کے طالبان رہنماؤں کے دوروں سے ان کی قطعی سیاسی شکست ظاہر ہوتی ہے۔"

انہوں نے کہا، "اگر وہ امن چاہتے ہیں تو طالبان اس منزل کا راستہ کھو بیٹھے ہیں۔" "امن کی منزل افغان عوام ہیں۔ ان کی حکومت امن عمل کا انتظام کر رہی ہے۔"

انہوں نے مزید کہا، "ہمیں یقین ہے کہ متعدد طالبان رہنماؤں کی ان کوششوں کا مثبت نتیجہ نہیں نکلے گا۔"

روسی اثر و رسوخ

روس امن مذاکرات پر اثرانداز ہونے کی کوشش کر رہا ہے اور اس نے ماسکو میں فروری اور مئی میں افغان سیاسی رہنماؤں کے ساتھ دو سابقہ اجلاس منعقد کیے تھے۔

مبصرین، تاہم ، افغانستان کی بات کرتے وقت روس کے محرکات سے محتاط ہیں۔

"روس پر افغانستان میں شراکت دار کی حیثیت سے اعتماد نہیں کیا جانا چاہئے۔آکسفورڈ یونیورسٹی کے سینٹ انتونی کالج میں شعبہ سیاست اور بین الاقوامی تعلقات کے شعبے میں ڈاکٹر کے محقق سموئل رومانی کے مطابق۔

انہوں نے 11 ستمبر کو خارجہ پالیسی میں لکھا تھا، "امریکہ اور طالبان کے درمیان امن مذاکرات کا خاتمہ روس کو ملک میں اپنی سفارتی موجودگی کا اعادہ کرنے کا موقع فراہم کرتا ہے۔"

"روس کی بین الاقوامی سطح پر افغانستان کی تسلیم شدہ حکومت کے اختیارات کی بغاوت۔انہوں نے کہا، اور افغانستان میں امریکی ارادوں کے بارے میں غلط معلومات پھیلانے سے پتا چلتا ہے کہ ماسکو خطے میں ایک خطرناک مخالف ہے۔

افغانستان اور روس کے تعلقات خراب ہوتے جارہے ہیں کیونکہ کریملن طالبان کے ساتھ تعلقات کو مستحکم کررہی ہے جبکہ ماسکو میں جائز افغان حکومت کو "امن مذاکرات" سے خارج کرتے ہیں۔

جلال آباد کے ایک قبائلی عمائد اور سیاسی رہنما، محمد بصر نے کہا ، "روس اور ایران نے ہمیشہ امن مذاکرات کے عمل کو خراب کرنے کی کوشش کی ہے کیونکہ وہ افغانستان کے ساتھ کئی دہائیوں سے جاری شورش کے خاتمے کی کوششوں پر توجہ دینے کی بجائے جیو پولیٹیکل مقابلہ کے ایک علاقے کے طور پر نمٹتے ہیں۔

انہوں نے ایک انٹرویو میں کہا، "امریکہ کی طرف سے مذاکرات معطل کرنے کے بعد ، اب یہ ممالک [صورتحال] سے فائدہ اٹھا رہے ہیں اور امریکی انتظامیہ اور طالبان قیادت کے مابین غلط فہمی پیدا کرکے اس عمل کو مکمل طور پر ختم کرنے کی کوششیں کر رہے ہیں۔"

جنگ میں ایک اہم حصہ ڈالنے والا

کابل میں مقیم ایک فوجی ماہر اسداللہ والوالجی نے کہا ، "ماسکو کے دورے کی، ان کے پچھلے دوروں کی طرح، افغان امن عمل پر بھی اس کا کوئی اثر نہیں ہے۔" "وہ موقع سے فائدہ اٹھانے کے لئے پوری کوشش کر رہے ہیں۔"

انہوں نے کہا، "یہ سفر امن میں مددگار نہیں ہے کیونکہ ماسکو خود بھی طالبان کے مالی اور فوجی مددگاروں میں شامل ہے۔"

والوال جی نے روس پر الزام لگایا کہ وہ افغانستان میں جنگ اور تشدد کے بڑھ جانے میں ایک اہم کردار ادا کرتا ہے۔

انہوں نے کہا، "روسیوں نے ہمارے ملک میں جنگ اور خونریزی کی بنیادیں چھوڑ دی ہیں ، جو بدقسمتی سے آج بھی شورش اور تشدد کے ساتھ جاری ہیں۔"

کابل میں مقیم ایک سیاسی تجزیہ کا ، حامد نوری نے ، دوحہ ، قطر میں امریکی مذاکرات کاروں کے ساتھ امن مذاکرات کی ناکامی کا ذمہ دار طالبان کو قرار دیا۔

انہوں نے کہ "امن مذاکرات کی ناکامی اور منسوخی کی اصل وجہ طالبان ہیں۔" "امن معاہدے پر دستخط ہونے سے ایک یا دو دن باقی رہ گیا تھا، لیکن بدقسمتی سے اس گروپ نے بہت سارے بے گناہ افراد کو ہلاک کیا اور خود کش حملے کرکے تشدد میں اضافہ کیا۔"

نوری نے کہا، "میرے خیال میں مذاکرات کی منسوخی کے بعد ماسکو کا طالبان کا دورہ روسی حکام کی درخواست پر ہوا ہے تاکہ ایک بار پھر طالبان اور روسی افغان اور بین الاقوامی افواج کے خلاف لڑنے کے لئے مضبوط عزم کرسکیں۔"

انہوں نے کہا، روسیوں کی افغانستان سے دیرینہ دشمنی ہے۔ "انہوں نے افغانستان میں اپنی ناکامی کو کبھی فراموش نہیں کیا۔ افغانستان میں امن لانے کا کوئی ارادہ نہ رکھنے کے علاوہ، ماسکو امن عمل کو خراب کرنے کی کوشش کر رہا ہے اور وہ اپنی تاریخی شکست کا بدلہ لینا چاہتا ہے۔"

اس رپورٹ میں کابل سے تعلق رکھنے والے سلیمان اور کراچی سے تعلق رکھنے والے ضیاء الرحمن نے تعاون کیا۔

کیا آپ کو یہ مضمون پسند آیا
33
نہیں
تبصرے 5
تبصرہ کی پالیسی
Captcha
| 09-20-2019

جناب وہ اگر کمزور پوزیشن میں ہوتے تو پورے ایک سال سے امریکہ منتیں نہ کر رہا ہوتا امن معاہدے کی۔ انیس سال بعد دنیا کو پتہ چل گیا کہ جنگ ٹیکنالوجی سے جیتی جاتی ہے یا جزبے سے۔ پوری دنیا کی فوج ایک طرف اور طالبان ایک طرف۔ وہ ایک نئی عالمی طاقت بننے جا رہے ہیں اور آپ بکواس کر رہے ہیں کہ ان کی پوزیشن کمزور ہے۔

جواب
| 09-19-2019

طالبان کی جانب سے امت مسلمہ کو مبارک ھو۔ امریکہ کے پسینے نکال دیے ہیں امریکی فوج لڑنےکی صلاحیت کھو چکی ھے۔ آپ جھوٹ لکھ رہے ہیں

جواب
| 09-17-2019

یہ رپورٹ نہایت مفصل اور دلچسپ تھی، لیکن بدقسمتی سے اس میں چند ایسے نکات ہیں جو صرف امریکی استعمار کے موقف اور مقام کو فروغ دے رہے ہیں۔۔۔ اگرچہ روس آج افغانستان میں تخریبی عزائم رکھتا ہے، تاہم روس اس 40 سالہ بحران کا ذمہ دار نہیں، بلکہ امریکی استعمار اور عرب بنیاد پرست ریاستیں اس کی ذمہ دار تھیں، جو یہاں ڈالر جہاد منصوبہ لے کر آئے اور اس خطے کے لوگوں کو ان کے عمدہ ایّام سے محروم کر دیا۔

جواب
| 09-17-2019

مصنف کی جانبداری عیاں ہے۔ اس مکالہ میں جانبدارانہ ہونے کے ساتھ ساتھ مصدقہ ہونے کا فقدان ہے۔ روس سے أفغانستان میں امریکی موجودگی کی طوالت کی خواہش کی توقع غیر منطقی ہے۔ امریکی مالیاتی اخراج اور صدر ٹرمپ کے لیے داخلی سیاسی اثرات سے بالواسطہ اطمینانِ قلب حاصل ہو سکتا ہے۔ اس کے متوازی، خطے سے امریکی روانگی علاقائی ممالک کے لیے زیادہ سود مند ہے۔ لہٰذا امریکہ سے توقع کی جاسکتی ہے کہ وہ نقصانات کے باوجود رکا رہے گا۔
ان تمام حساب کتاب میں، تمام شریکانِ جنگ افغانوں کو درپیش انسانی نقصانات کو نظر انداز کیے ہوئے ہیں۔ یہ اس تنازع کو ختم کرنے کے لیے کافی وجہ ہے۔

جواب
| 09-16-2019

ایک جانب تو آپ یہ کہتے ہیں کہ طالبان کمزور مقام پر ہیں، لیکن اس کے ساتھ ساتھ آپ کہتے ہیں کہ روس اور ایران طالبان کی مدد کر رہے ہیں۔ یہ سوچنا نا ممکن ہے کہ طالبان کمزور مقام پر ہیں کیوں کہ امریکہ اور امریکہ کی أفغان حکومت طالبان سے مزاکرات کرنے کو مر رہے ہیں۔ پاکستان صرف ایک ہی شرط پر امریکہ کی أفغانستان میں مدد کرے کہ امریکہ کشمیر میں پاکستان کی مدد کرے۔ خدا أفغانستان اور دنیا بھر میں بنی نوع انسان کے لیے امن لائے۔

جواب