دہشتگردی

2021 میں داعش کے حملوں میں کمی لیکن الازہر کی جانب سے تنظیم کی 'ڈرون' حکمت عملی کا انتباہ

از ولید ابو الخیر

image

24 اپریل کو عراق کے جنوبی صوبہ ذی قار میں ناصریہ شہر کے قریب طلوع آفتاب کے وقت ایک شخص ڈرون اڑتے ہوئے۔ [اسد نیازی/اے ایف پی]

قاہرہ -- سنہ 2021 میں عراق، شام اور مصر میں "دولتِ اسلامیہ" (داعش) کی طرف سے ذمہ داری قبول کیے جانے والے حملوں کی تعداد میں کمی واقع ہوئی، حتیٰ کہ ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ تنظیم کے مذموم عزائم وہی ہیں اور یہ کہ یہ ایک متواتر لاحق خطرہ ہے۔

مصر کی الازہر رصدگاہ برائے انسدادِ انتہا پسندی کے مطابق، داعش نئے حملوں کی منصوبہ بندی کرنے اور انہیں انجام دینے کے لیے تکنیکی ترقی، بشمول بغیر پائلٹ کے فضائی گاڑیوں (یو اے ویز) جنہیں عام طور پر "ڈرون" کہا جاتا ہے، سے فائدہ اٹھا رہی ہے۔

مشرق وسطیٰ کے ایک محقق کول بنزیل نے 10 دسمبر کو سنہ 2021 میں داعش کی حالت پر ولسن سینٹر کی ایک رپورٹ میں کہا، "حملوں کی تعداد اور ہلاکتوں کے لحاظ سے، رجحان کے خطوط پچھلے سال کے دوران کچھ کم ہیں، لیکن اس حد تک نہیں کہ اس اعتماد کو متاثر کر سکے کہ لہر بدل رہی ہے۔"

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ عراق میں اس سال اب تک اس تنظیم نے 87 حملے کیے ہیں اور ہر ماہ 149 ہلاکتیں ہوئی ہیں، جو کہ سنہ 2020 میں اوسطاً 110 حملوں اور 207 ہلاکتوں سے کم ہیں۔

image

انسداد انتہا پسندی کی کوششوں کے بارے میں جاننے کے لیے ایک یورپی وفد قاہرہ میں الازہر رصدگاہ کے دورے پر۔ [الازہر رصدگاہ برائے انسدادِ انتہا پسندی]

image

داعش کی پراپیگنڈہ ویڈیو کے ایک سکرین شاٹ میں تنظیم کے عناصر میں سے ایک کو دکھایا گیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ یورپی سرزمین پر حملوں کے لیے قدیم طریقوں سے دھماکہ خیز مواد کیسے تیار کیا جاتا ہے۔ [الازہر رصدگاہ برائے انسدادِ انتہا پسندی]

اس میں کہا گیا، "کمی کچھ حوصلہ افزاء ہے، لیکن یہ اب بھی اکثر ہونے والے حملوں کی ایک بڑی تعداد ہے۔"

کچھ حملے دوسروں کے مقابلے زیادہ پیچیدہ اور مہلک تھے، جیسے کہ 19 جولائی کو ہونے والا خودکش بم حملہ جو عید الاضحٰی سے قبل بغداد کے ایک مصروف بازار میں ہوا، جس میں کم از کم 36 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

ولسن سینٹر کی رپورٹ کے مطابق، شام میں، داعش نے اس سال اب تک اوسطاً 31 حملوں اور 74 ہلاکتوں کی ذمہ داری قبول کی ہے، جو کہ سنہ 2020 میں ہر ماہ 45 حملوں اور 95 ہلاکتوں سے کم ہے۔

مصر میں، جہاں داعش سے الحاق شدہ تنظیم انصار بیت المقدس جزیرہ نما سینائی میں سرگرم ہے، اس گروہ نے سنہ 2021 میں اب تک اوسطاً نو حملوں اور 17 ہلاکتوں کی ذمہ داری قبول کی ہے، جو کہ سنہ 2020 میں ہر ماہ 16 حملوں اور 40 ہلاکتوں سے کم ہے۔

'ڈرون' حکمتِ عملی

الازہر کی رصدگاہ نے 29 نومبر کو داعش کی طرف سے دہشت گرد حملے کرنے اور نئے پیروکاروں کو بھرتی کرنے کے لیے تکنیکی ترقی کے غلط استعمال سے خبردار کیا تھا۔

رصدگاہ انتہا پسند گروہوں کی طرف سے جاری کردہ رپورٹوں کی نگرانی، ترجمہ اور تجزیہ کرتی ہے، اور انتہا پسندی کا مطالعہ کرنے والے تحقیقی مراکز کی رپورٹوں کی نگرانی کرتی ہے۔

رصدگاہ نے کہا کہ داعش کے نئے آلات میں سب سے اہم اس کے منصوبہ بندی کرنے اور حملوں کی انجام دہی میں ڈرون کا استعمال ہے۔

اس نے کہا، "ڈرونز کی تیاری کے حوالے سے تکنیکی ترقی پر گہری نظر رکھنا ضروری ہے، [یہ تعین کرنے کے لیے کہ] وہ ان گروہوں تک کیسے پہنچتے ہیں۔"

رصدگاہ نے کہا کہ یہ بھی ضروری ہے کہ دفاعی کارروائیوں اور بیداری مہم کے ذریعے دہشت گرد گروہوں پر دباؤ ڈالتے رہیں، تاکہ ممکنہ متاثرین کو ان کے بھرتی کے پُرفریب طریقوں کا شکار ہونے سے بچایا جا سکے۔

شیخ عبدالطاہر شہتا، جو الازہر یونیورسٹی کی فیکلٹی آف شریعہ میں لیکچرار ہیں، نے کہا کہ یہ بیان "دہشت گرد اور انتہا پسند گروہوں بالخصوص داعش کے خطرات کے بارے میں آگاہی پھیلانے کے لیے جامعہ الازہر کی خواہش کا حصہ ہے"۔

انہوں نے کہا کہ داعش کا خطرہ "اب بھی موجود ہے۔ بدقسمتی سے، اس تنظیم میں اب بھی ایسے پیروکار موجود ہیں جن کے نظریے اور ذہنوں میں زہر گھول دیا گیا ہے اور جو تنظیم کے لیے دہشت گرد حملے کر سکتے ہیں۔"

تنہا بھیڑیا حملہ کرتا ہے

حکمت عملی کے تجزیہ کار اور دہشت گرد گروہوں کے ماہر یحییٰ محمد علی نے کہا، "داعش کے خلاف جنگ ابھی ختم نہیں ہوئی ہے۔"

انہوں نے کہا، "عصرِ حاضر میں اس کا مقابلہ کرنا شام اور عراق میں ہونے والی سابقہ محاذ آرائیوں سے کہیں زیادہ مشکل ہو سکتا ہے، کیونکہ اب اس کے زمین پر حقیقی مضبوط گڑھ نہیں ہیں اور اب یہ مکمل طور پر تنہا بھیڑیوں کے حملوں پر منحصر ہے۔"

علی نے یاد دلایا کہ حملوں کی قسم ہر ایک خطے میں مختلف ہو سکتی ہے۔

شام، عراق اور کچھ افریقی ممالک میں یہ گروہ تجارتی طور پر دستیاب ڈرونز کو ہتھیار بنا سکتا ہے یا دیسی ساختہ دھماکہ خیز آلات (آئی ای ڈیز) استعمال کر سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حملے دو یا تین عناصر کے چھوٹے سیلز کے ذریعے کیے جا سکتے ہیں۔

داعش کی نئی حکمت عملی کا مقابلہ کرنے کے لیے وقت انٹیلیجنس کا کام اہم ہے، انہوں نے کہا کہ اس کے ساتھ بیداری پیدا کرنے کی کوششیں بھی ہونی اس چاہیئیں، تاکہ عوام کسی بھی مشکوک سرگرمی کی اطلاع دفاعی حکام کو دیں۔

بیداری پھیلانا

جامعہ الازہر کی فیکلٹی آف شریعہ کے پروفیسر عبدالنبی بکر نے کہا کہ داعش کو معلوم ہو گیا ہے کہ وہ "زمین پر فوجی فتوحات حاصل کرنے سے قاصر ہے، اور اس لیے اس کے حملے محدود لیکن مرکوز ہوں گے۔"

انہوں نے کہا کہ یہ خصوصاً مشرق وسطیٰ، یورپ اور کچھ افریقی ممالک میں مستقبل میں ہونے والے حملوں سے یہ خوف و ہراس پھیلانے اور سلامتی کو کمزور کرنے کی کوشش کرے گی تاکہ عدم استحکام پیدا کیا جا سکے۔

اس لیے، "یہ انتہائی اہم ہے کہ الازہر کے ادارے دہشت گردی سے نمٹنے کا کام جاری رکھیں، خصوصاً چونکہ یہ دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ کے ساتھ مل کر چل رہی ہے"۔

انہوں نے کہا، "الازہر مصر اور دنیا کا ایک ممتاز ادارہ ہے، اور جو کچھ یہ شائع کرتا ہے... اسے عوام بڑے پیمانے پر اپناتے اور بڑے پیمانے پر قبول کرتے ہیں"۔

بکر نے کہا کہ الازہر انتہا پسندانہ نظریات اور فتاویٰ کا مقابلہ کرنے کے لیے نظریاتی جنگ اپنے تمام وسائل اور صلاحیتوں کے ساتھ لڑ رہی ہے۔

انہوں نے کہا، ان مسائل پر توجہ دے کر الازہر "ان گروہوں اور خاص طور پر داعش کے خلاف بیداری کو بڑھاتی ہے اور انتہا پسندی اور دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے مصری، علاقائی اور بین الاقوامی کوششوں سے ہم آہنگ ہوتی ہے"۔

کیا آپ کو یہ مضمون پسند آیا

تبصرے 0

تبصرہ کی پالیسی * لازم خانوں کی نشاندہی کرتا ہے 1500 / 1500