پناہ گزین

اقوام متحدہ کا افغان مہاجرین میں اضافے کا انتباہ، اقتصادی امداد کا مطالبہ

از پاکستان فارورڈ اور اے ایف پی

image

افغان مہاجرین 6 ستمبر کو پاکستان کے شہر کوئٹہ کے مضافات میں ایک عارضی خیمے میں قائم پناہ گاہ کے ارد گرد بیٹھے ہیں۔ [بنارس خان/اے ایف پی]

اقوام متحدہ -- اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین (یو این ایچ سی آر) فلپو گرینڈی نے معاشی تباہی کے بڑھتے ہوئے خدشات کے پیشِ نظر افغان پناہ گزینوں کی تعداد میں اضافے سے خبردار کیا ہے اور فوری اقتصادی امداد کا مطالبہ کیا ہے۔

اگست میں سابقہ حکومت کے خاتمے کے بعد سے افغان باشندے اپنے وطن سے بھاگ رہے ہیں یا بھاگنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

زیر التواء 'اندرونی دھماکہ'

جنیوا سے ویڈیو لنک کے ذریعے گرینڈی نے صحافیوں کو بتایا، "ہمیں ایک ایسے اندرونی دھماکے کا خطرہ لاحق ہے جو یقینی طور پر ملک کے اندر لوگوں کی آمد کا باعث بنے گا لیکن اس وقت زندگی کے بہتر حالات کی تلاش میں ملک سے باہر بھی جانے کا بھی باعث بنے گا"۔

گرینڈی نے یہ نہیں بتایا کہ سابقہ حکومت کے خاتمے کے بعد سے کتنے لوگ بے گھر ہوئے ہیں اور کتنے نئے پناہ گزینوں کی آمد متوقع ہے کیونکہ ان کے پاس ابھی تک یہ اعدادوشمار نہیں تھے۔

اقوام متحدہ نے بارہا خبردار کیا ہے کہ افغانستان دنیا کے بدترین انسانی بحران کے دہانے پر ہے۔

امدادی گروہوں کے مطابق، افغانستان کی 38 ملین آبادی میں سے نصف سے زائد کو اس موسم سرما میں بھوک کا سامنا کرنا پڑے گا، کیونکہ معیشت تباہی کے دہانے پر ہے۔

گرینڈی نے کہا کہ بحران سے اب بھی بچا جا سکتا ہے، لیکن یہ نظام کو نافذ کرنے کے حوالے سے تیز تر کارروائی کا متقاضی ہے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ افغان معیشت کام کر سکے، خدمات جاری رہیں اور ملک میں نقدی کا بہاؤ دوبارہ شروع ہو۔

اگرچہ مدد کرنے کی کوششیں، بحران کے پیمانے کی وجہ سے کم ہیں، ان میں ضرورت مند افغانوں کو عالمی خوراک پروگرام کی طرف سے خوراک اور نقد رقم کی ترسیل شامل ہے۔

ایران کی جانب سے ملک بدریاں

انہوں نے کہا کہ گرینڈی ایرانی رہنماؤں کے ساتھ اس مسئلے پر بات چیت کے لیے کئی دنوں میں تہران جائیں گے۔

ایران کئی دہائیوں سے جنگ اور معاشی مشکلات سے فرار ہونے والے افغان مہاجرین کے لیے ایک اہم منزل رہا ہے۔

افغانستان میں غذائی قلت کے خطرے کے باوجود، ایران حال ہی میں ہر ہفتے دسیوں ہزاروں افغانوں کو ملک بدر کر رہا ہے، جن میں وہ لوگ بھی شامل ہیں جو طویل عرصے سے وہاں مقیم رہے تھے۔

یو این ایچ سی آر کے مطابق، ایران میں 3.4 ملین افغان ہیں، جن میں تقریباً دو ملین غیر دستاویزی مہاجرین اور 800,000 مہاجرین شامل ہیں۔

مزید برآں، اقوام متحدہ کے اندازوں کے مطابق، تقریباً 3.5 ملین افغان اپنے ملک کے اندر بے گھر ہو چکے ہیں، جن میں سے بہت سے اگست میں طالبان کے اقتدار میں آنے سے پہلے بے گھر ہوئے تھے۔

کیا آپ کو یہ مضمون پسند آیا

تبصرے 0

تبصرہ کی پالیسی * لازم خانوں کی نشاندہی کرتا ہے 1500 / 1500