https://pakistan.asia-news.com/ur/articles/cnmi_pf/features/2017/06/13/feature-02
معیشت |

پاکستان میں دیکھا گیا: ایرانی پن چرخی کی خوبصورتی اور دلکشی

عالمگیر خان

image

بیلوں کی جوڑی سے چلای جانے والی ایرانی پن چرخی، یہ ٹیکنالوجی صدیوں پہلے بنائی گئی تھی۔ یہ پاکستان، خصوصی طور پر وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقوں (فاٹا) میں بہت سالوں تک عام استعمال ہوتی تھی مگر اب زیادہ تر منظر سے غائب ہو گئی ہے۔ ]عالمگیر خان[

image

مہمند ایجنسی میں ایک کسان اپنی فصل کے لیے پانی نکالنے کے لیے دو بیلوں کو چلا رہا ہے۔ ]عالمگیر خان[

image

آج کل، ایرانی چرخی کی جگہ زیادہ تر ٹیوب ویل نے لے لی ہے مگر مہمند ایجنسی اور دوسرے قبائلی علاقوں میں یہ چرخی ابھی بھی تھوڑی تعداد میں موجود ہے۔ ]عالمگیر خان[

image

دو بیل پانی کے نظام کو چلتا رکھنے کے لیے دائرے میں گھومتے رہتے ہیں۔ ]عالمگیر خان[

image

وقت کے ساتھ لکڑی کی چرخی کی جگہ دھات نے پہیوں نے لے لی۔ ]عالمگیر خان[

image

سٹیل کی بالٹیوں کی ایک زنجیر جسے ایرانی پن چرخی کے نظام میں پانی کو نکالنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ ]عالمگیر خان[

image

ایک ڈرائیو شافٹ، عمودی دانتے کو بڑے پہیے سے جوڑتا ہے، جس کے اوپر بالٹیوں کی ایک زنجیر چڑھی ہوتی ہے۔ بالٹیوں کی زنجیر کنویں، ندی یا پانی کے دوسرے ذریعہ میں جاتی ہے اور پانی لاتی ہے۔ ]عالمگیر خان[

image

ایک بچہ، دو بیلوں کے پیچھے چل رہا ہے تاکہ آب پاشی کے نظام میں پانی کو چلتا رکھا جا سکے۔ ]عالمگیر خان[

غلنئی، مہمند ایجنسی -- ایرانی پن چرخی ایک صدیوں پرانا نظام ہے جسے کنویں سے پانی اوپر نکالنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ اس نظام میں لکڑی کے پہیوں کے ایک سلسلے، دندانوں اور بالٹیوں کو استعمال کیا جاتا ہے اور اسے توانائی ایک بیل دیتا ہے جو ایک دائرے میں گھومتا ہے۔

جدید زمانے میں، آب پاشی کے ان روایتی نظاموں کی جگہ زیادہ تر ٹیوب ویلوں نے لے لی ہے مگر پاکستان فارورڈ کو مہمند ایجنسی میں کم از کم ایک ایسا کسان ضرور ملا ہے جو ابھی تک اس روایتی نظام کو استعمال کر رہا ہے۔

یہ نظام دو گیئر پہیوں پر مشتمل ہوتا ہے: جب پہلا پہیہ گھومتا ہے تو دوسرے پہیے سے جڑی بالٹیاں کنویں میں جاتی ہیں اور ان میں پانی بھر جاتا ہے۔ جب بالٹیاں حرکت کرتی ہیں، تو پانی ایک دھاتی شافٹ میں گرتا ہے اور جو اسے حوضوں کے ایک پیچیدہ نظام میں خالی کرتا ہے جو کسان کی کھتی باڑی کی زمین میں پانی تقسیم کرتا ہے۔

image

مہمند ایجنسی میں ایک کسان کا بیٹا، پندرہ مئی کو خاندان کی زمین کو سیراب کرنے کے لیے صدیوں پرانے نظام کو استعمال کر رہا ہے۔ ]عالمگیر خان[

درج ذیل تصاویر، جنہیں پندرہ مئی کو لیا گیا، دکھاتی ہیں کہ ایرانی پن چرخی کا نظام کیسے کام کرتا ہے اور اس ثقافتی خزانے کی خوبصورتی کو اجاگر کرتی ہیں۔

کیا آپ کو یہ مضمون پسند آیا
4
نہیں
تبصرے 0
تبصرہ کی پالیسی
Captcha