معاشرہ

تین روزہ میلے میں مقامی فنکاروں کے کام کی نمائش کی گئی اور روایتی موسیقی اور کھانے پیش کیے گئے۔

حکام نے عسکریت پسندی کی شکست کو اجاگر کرنے کی غرض سے تین ماہ کی سرگرمیوں کا ارادہ کیا ہے۔

شہری کئی سالوں کی دہشت گردی اور خوف کے بعد، ثقافت، موسیقی اور فیشن کی تقریبات کا انعقاد کر کے اپنی دوبارہ ابھرنے کی قوت کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔

دہشت گرد گروہ اور جرائم پیشہ عناصر شہریوں کو دھوکہ باز خیراتی اداروں کو عطیات دینے کے لیے پھانستے ہیں۔

مرکز برائے تحقیق و علومِ سلامتی نے پاکستان سنٹر آف ایکسیلنس (پی اے سی ای) پروگرام کا آغاز کیا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ نوجوانوں کو اس خطے کی پرامن تاریخ کی یاد دہانی کرانے سے رواداری کو فروغ ملے گا اور اور انتہا پسندی کی روک تھام ہو گی۔

حکومت سوویت دور سے روسی زبان کی روانی کی ترجیح دیے جانے کو ختم کرنے کے لیے کوشاں ہے۔