آرکائیوز برائے

منتخب شدہ

بہت سی خواتین کے لیے، عام انتخابات میں ووٹ دینا ایک خواب ہی تھا۔ یہ سب گزشتہ ہفتے تبدیل ہو گیا۔

عمران خان کی پی ٹی آئی آزاد منتخب ارکان اور چھوٹی جماعتوں سے ایک اتحادی حکومت کے قیام کے لئے بات چیت کررہی ہے جبکہ حریف جماعتوں نے ایک احتجاجی 'مہم' کے آغاز کا عزم کرلیا ہے۔

تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ انتہاپسندی، معیشت، آبادی میں اضافہ، پانی کی کمی اور سول-فوجی تعلقات مستقبل کی سب سے اہم مشکلات ہیں۔

خان نے احتساب اور تمام پاکستانیوں کے مفاد میں پالیسی اصلاحات کا عہد کیا، جبکہ مخالف جماعتیں انتخابی دھاندلی کا دعویٰ کر رہی ہیں اور انہوں نے ووٹوں کے شمار کی آزادانہ نگرانی کا مطالبہ کیا۔

19 ملین نئے ووٹر، بشمول کئی ملین خواتین اور نوجوان، مقابلے میں فیصلہ کن کردار ادا کر سکتے ہیں۔

سول سوسائٹی کے گروہ اس بارے میں تشویش کا اظہار کر رہے ہیں کہ کالعدم گروہ 25 جولائی کے عام انتخابات میں شرکت کرنے کا راستہ تلاش کر چکے ہیں۔

گزشتہ ہفتے ایک انتخابی ریلی میں ہونے والے بم دھماکے میں کم از کم 149 افراد جاں بحق ہوئے تھے۔

ایران کی خصوصی فورسز، تہران کے حکم کو پورا کرنے کے جواب میں، طالبان کے جنگجوؤں میں سے سب سے زیادہ ذہین اور قابل کے لیے ایک چھہ ماہ کا تربیتی پروگرام فراہم کر رہی ہیں۔

آگاہی مہم کا مقصد من گھڑت معلومات کو پھیلنے سے بچانا ہے۔

اپنے ہی مردوں کی جانب سے دہائیوں پہلے عائد کردہ پابندی کو مسترد کرتے ہوئے، موہری پور میں خواتین اپنا حقِ رائے دہی استعمال کریں گی۔

سیاسی جماعتوں اور ان کے راہنماؤں کی حفاظت کے لیے جوائنٹ کرائسس مینجمنٹ یونٹس بنائے گئے ہیں۔

مستونگ بلوچستان میں ہونے والے انتخابی جلسے کے دوران داعش کے ایک خودکش بمبار نے کم ازکم 149 افراد کو شہید کر دیا اور قتل عام سے تعلق کے شبہے میں اب تک 9 گرفتاریاں کی گئی ہیں۔

اے این پی کے قتل کیے جانے والے راہنما ہارون بشیر بلور کے بیٹے دانیال بلور نے کہا کہ میں پاکستان کے لیے اپنی جان بھی قربان کرنے کے لیے تیار ہوں۔

ایک حالیہ تحقیق کے مطابق، پاکستان میں امن لانے میں قومی ایکشن پلان نے بڑی کامیابیاں حاصل کی ہیں۔

تمام جماعتوں سے تعلق رکھنے والے سیاسی قائدین نے عہد کیا ہے کہ وہ دہشت گردوں کے سامنے نہیں جھکیں گے اور انتخابات کے ذریعے امن کے لیے جدوجہد جاری رکھیں گے۔

تقریبا 15,000 تماشائیوں نے 9 جولائی کو شندور پولو فیسٹیول کے فائنل میچ میں شرکت کی۔

اگرچہ 25 جولائی کے عام انتخابات سے قبل چند دہشتگردانہ حملے ہوئے ہیں، تاہم پاکستانی حکام سیکیورٹی فراہم کرنے میں چوکنا ہیں۔

فروری میں چڑیا گھر کے کھلنے سے لے کر اب تک 34 سے زیادہ جانوروں کی ہلاکتوں کے باجود، ہزاروں مہمان روزانہ چڑیا گھر آتے ہیں۔

25 جولائی کو ہونے والے عام انتخابات سے قبل حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل-این) کے مستقبل پر اب سوالیہ نشان لگ گیا ہے۔

مشاہدین کا کہنا ہے کہ اس اقدام سے نفاذِ قانون کی ایجنسیاں اور عوام دہشتگردی کے خلاف جنگ میں شریک ہو جائیں گے۔

مالاکنڈ ڈویژن کے علاقے ہیروشاہ میں جنگلات کے خاتمے سے لڑنے کے لیے کروڑوں درخت لگائے گئے ہیں۔

امریکی سفیر ایلس ویلس کا کہنا ہے کہ پاکستان کو افغانستان کے امن کے عمل میں ایک اہم کردار ادا کرنا ہے۔